الثلاثاء، 21 شوال 1440| 2019/06/25
Saat: (M.M.T)
Menu
القائمة الرئيسية
القائمة الرئيسية

بسم الله الرحمن الرحيم

 حزب التحریر/ ولایہ پاکستان

  • 26 رمضان
  • خلافت میں عوامی نمائندوں کا کردار

     

    شریعت نے مسلمانوں کے امور کے لیے نمائندوں کےانتخاب کی اجازت دی ہے۔ رسول اللہ ﷺنےبیعتِ عقبہ ثانیہ کےموقع پر انصارسےفرمایا :

  • أَخْرِجُوا إلَيّ مِنْكُمْ اثْنَيْ عَشَرَ نَقِيبًا، لِيَكُونُوا عَلَى قَوْمِهِمْ بِمَا فِيهِمْ

  • ”اپنےمیں سےبارہ سردار منتخب کرو جواپنےلوگوں کےامور میں ان کےنمائندہ ہوں“ ( ابن ہشام نےکعب بن مالک سےروایت کیا)

  • ریاستِ خلافت کی مجلس اُمت میں موجود نمائندے عوام کےمنتخب کردہ ہوتےہیں اور یہ نامزد کردہ نہیں ہوتے۔ تاہم مجلسِ اُمت کا کام حکمرانی کرنا نہیں ہوتا اور خلیفہ کی مانند مجلسِ امت کو بھی قانون سازی کا اختیار حاصل نہیں ہوتا۔ بلکہ اس کا کام خلیفہ کا کڑامحاسبہ کرنا اور لوگوں کےامورکی دیکھ بھال میں خلیفہ کو مشورہ دینا ہوتا ہے۔خلیفہ لوگوں کےامور کی دیکھ بھال میں مشورے کے لیےمجلسِ امت کی طرف رجوع کرتا ہےتاہم یہ مشورہ کسی حلال کو حرام بنانےیا ایک حرام امر کو حلال بنانےکےلیےنہیں کیا جا سکتا ۔

     
    Friday, 26 Ramadan 1440 AH - 31 May 2019 CE 

Last modified onمنگل, 04 جون 2019 08:42

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated. HTML code is not allowed.

اوپر کی طرف جائیں

دیگر ویب سائٹس

مغرب

سائٹ سیکشنز

مسلم ممالک

مسلم ممالک